Solo Travel,  اردو سیکشن

داستانِ سیاہ میر

جی ہاں بلکل یہ جل کھنڈ والا پہاڑ ہے۔۔

بابوسر والے روڈ پر اس کا ہی راج چلتا ہے۔۔ میں اس کی خوبصورتی کیا بیاں کروں ؟؟  رنگ کالا۔۔۔۔پر شدید کشش رکھتا ہے۔۔ کالا ہے میرا یار پر پیارا ہے۔۔

یہ بلکل ایسا محبوب ہے جیسے سادگی پسند ہے ۔۔

اس سادگی میں تو مزید خوبصورت لگتا ہے ۔

“یو نو نیچرل بیوٹی” ۔۔۔ IMG_8638IMG_8641

یہ جو برف کے تین چھوٹے تکون اس پہاڑ پر دکھتے ہیں  یہ بلکل ایسے ہی ہیں جیسے محبوب ہلکا پھلکا سینگھار کر لے۔۔

ان ہرے بھرے پہاڑوں کے بیچ یہ بلیک بیوٹی کیسی لگتی ہے اس چیز کو وہاں جا کر محسوس کریں۔

کاش کہ میرے پاس مسافر شب کی دوربیں ہوتی تو میں اس کے خدوخال کو بہت قریب سے دیکھ سکتی جس سے میرے روح کے قرتاس پہ سیاہ میر کے کچھ اور جلوے نمایاں ہو سکتے۔۔

پر میں نے تو اس کو چلتی گاڑی میں دیکھا۔ اک جھلک جل کھنڈ کے اس پہاڑ کی ۔ بس پھر سفر یہی رُک گیا۔۔

ہر کسی کو الگ الگ چیز اٹریکٹ کرتی ہے ۔ ایک چیز سے آپ کو کشش محسوس ہوتی ہے تو ضروری نہیں کہ دوسرا بھی وہ ہی کشش محسوس کرے۔ وہ الگ بات ہے کہ آجکل انسان بھیڑ چال چل رہا ہے۔۔۔۔

مجھے اس پہاڑ سے بے حد کشش محسوس ہوتی ہے۔ اس کا نام جاننے کی بہت کوشش کی پر ناکام رہی۔۔ جب بھی پوچھا تو جواب ملا “جھلکنڈ والا پہاڑ”

IMG_8643IMG_8644سو دس از کالڈ ان نیمڈ پیک”۔۔۔۔

جب  بھی دیکھا اس خوبصورتی کو انڈر ایسٹیمیٹ ہوتے دیکھا۔ کالا رنگ ہونے کی وجہ سے ہر کسی کو اٹریکٹ نہیں کرسکتا فقط وہ آنکھیں اس میں خوبصورتی دیکھ سکتی ہیں جن کو روح کی آنکھوں سے دیکھنا آتا ہو۔۔

کچھ کونسیپٹ یہ بنا ہوا ہے کہ کالا رنگ جادو ٹونے کا، دکھ و رنج کا رنگ ہے پر ایسا ہرگز نہیں۔ یہ تو پُر اسراریت سے بھرا اک راز ہے۔ کالا رنگ شدید کشش رکھتا ہے، یہ اپنے اندر اک طاقت رکھتا ہے۔۔

اہلِ نظر کے مطابق کالا رنگ۔۔ الله کا رنگ ہے۔ جو تمام کائنات میں پھیلا ہوا ہے۔۔

(دیوسائی میں ایک رات سے اقتباس)

ہر ہوس سے آزاد ہے یہ رنگ ۔

وہ کہتے ہیں نہ:

“غالب آئی ہوس محبت پر

آرزوں کا رنگ کالا ہے۔”

میرے اک دوست اسے ٹائیگر ہل “کے نام سے پُکارتے ہیں۔

میرےنزدیک اس کا نام “سیاہ میر” ہے۔۔۔

🖤🖤مسا تالپور 🖤🖤IMG_8642